مصنف کے بارے میں

متعلقہ مضامین

One Comment

  1. 1

    الطاف جمیل ندوی

    آپ کی یادیں کمال کی ہیں واقعی اس گرٹہ کے نیچے بہنے والے پانی کی طرح میرے بھی آنسو خشک ہوگئے ہیں مجھے بھی کچھ ایسی ہی حسین یادوں کا زمانہ یاد آیا جب میں ایک گرٹ پر جاکر آٹا پستے دیکھ لیتا تھا اور گھنٹوں اس گرٹ کے مالک سلام کمار کے پاس بیٹھ کر مکی کی روٹی اور کشمیری آنچار کھاتا رہتا تھا جو اس نے خود بنائی ہوتی تھی یہ الگ بات ہے کہ گھر آکر اکثر پٹائی ہوتی تھی کہ اتنی دیر کیوں کی گھر میں سب نے بنا روٹی کے چائے پی لی
    وہ کیا زمانہ تھا جو ہم اب صرف ہماری یادوں میں رہ گیا ہے
    آپ کا مضمون پڑھ کر لگا جیسے یادیں آپ کی نہیں بلکہ میری اپنی ہیں
    خوش و خرم شاد باد رکھے رب الکریم استاد

    Reply

آپ کی راۓ

تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ تفصیلات محفوظ ہیں - Tafseelat © 2012-2020 - Designed, Developed & Maintained By Acmosoft